میری نظر میں زندگی بہت خوبصورت ہوتی ہے لیکن یہ انسان پر بھی منحصر ہے کہ وہ زندگی کوئی کیسے گزرتا ہے اور اس کو کیسے بناتا ہے بدصورت یا خوبصورت ؟
جیسے لمحہ لمحہ زندگی بنتا ہے ایسے ہی ہر آنے والا لمحہ گزرے لمحے کی یاد بھی ساتھ لے کر آتا ہے
کبھی کبھی ہم وقتی طور پر سب کچھ بھلا دیتے ہیں زمانے کے فریب ، دنیا کی رنگینیوں اور ماضی کی تلخیوں کو بھول کر ہم خود کو پر سکون ظاہر کرنے کی کوشش کرتے ہیں لیکن کبھی بھری محفل میں کوئی لطیفہ یا کوئی واقعہ ہم کو فر سے یادوں کے سمندر میں پھینک دیتا ہے ہمارے لا شعور کے بند دروازے جن پر ہم سمجھوتوں کی مہر لگا چکے ہوتے ہیں ایک ایک کر کے سب کھولتے چلے جاتے ہیں اور ہم آس پاس کے ماحول سے بے خبر ماضی میں کھو جاتے ہیں اور جب ماضی کے تھکا دینے والے راستوں سے پرنم آنکھوں سے واپس لوٹتے ہیں تو اپنے آپ میں ہی خود کو اجنبی محسوس کرتے ہیں
ماضی اور ماضی کی یادیں بھی شاید زندگی کا انمول تحفہ ہوتی ہیں کبھی تو یہ یادیں انسان کو رلاتی بھی ہیں اور کبھی ہنساتی ہیں اور ساتھ ساتھ انسان کو بہت کچھ سمجھنے اور سیکھنے کے قابل بناتی ہیں شاید اسی ہنسنے ہنسانے رونے رلانے کا نام ہی زندگی ہے